ہفتہ, جون 8, 2013

لاالٰہ الا اللہ


(( توحید رب العالمین کہ اساس ہے اسلام کی اور اولین عقائد میں سے بھی اول ہے، عملی زندگی میں اسی سانچے میں ڈھلنا یا بے رخی دکھانا  ہمیں اوج ثریا سے تحت الثریٰ تک لےآیا ہے!
زندہ قوت تھی زمانے میں جو توحید کبھی۔ ۔ ۔۔ ۔ ۔آج کیاہے فقط ایک مسئلہ علم کلام))

                            
لاالٰہ

          پہلی چیز۔۔۔۔۔نفی مطلق۔۔۔ابن آدم پر عائد پہلا فرض۔۔۔دامن توحید کا پناہ گزین ہونے کی پہلی سیڑھی۔۔۔ شرک کی ساری آلائشوں کو دھو ڈالنا ۔۔۔۔ لازم ہے کہ بندہ سب کی نفی کرے۔۔۔۔۔نفی خود ساختہ ربوبیت کے دعوے داروں کی۔۔۔ سب پوجے جانے والوں کی۔۔۔ہر نظام ،ہر نظریہ حیات۔۔۔ سب کی نفی کر دے۔ ہر طاغوت سے اعلان برات ۔۔۔ ہرآمر وقت اور ۔۔۔بزعم خود حاکم مطلق سے ۔۔۔بیزاری کا اظہار ۔ ۔۔۔ ۔زباں سے کہہ بھی دیا لا الٰہ تو کیا حاصل ۔۔۔عملا کاربند ہو جائے کہ ۔۔۔ کسی فانی کی خدائی۔۔۔۔ اور حاکمیت ۔۔۔محض  روئے زمین پر ہی نہیں ۔۔۔کائنات کی ازلی ابدی وسعتوں تک پر ۔۔۔ محیط نہ تو پہلے کبھی تھی ۔۔۔ اور نہ آئندہ ہو سکتی ہے۔ ۔۔یہی پہلی "نہ" ملت ابراہیمی کا درس اولیں!۔۔۔ شجرہ ایمان کی اساس محکم !!


          نفی ہر اس کی ۔۔۔۔۔جس کی عبادت کی جائے۔۔۔ایسی ہرعبادت کی نفی۔۔۔ اور ان کی نفی جو عبادت کرتے ہیں!۔۔۔ الٰہ کی مثل۔۔۔مانند۔۔۔ الوہی خصوصیات کا حامل ۔۔۔کوئی بھی مانا جائے۔۔۔کسی کو بھی گردانا جائے ۔ ۔۔  تعظیم کے نام پر عبادت کو اس کے لیے بجا لایا جائے ۔۔۔۔یا نظام کائنات چلانے میں ۔۔۔ دخیل مانا جائے۔۔۔سب فریب نظر ہے ۔۔اس کے سوا کچھ نہیں۔۔۔ نفی ان تمام معبودانہ ناموں کی۔۔۔ان سے موسوم توہمات کی۔۔۔تصورات کی۔۔۔  اس سب فتورعقل  کی نفی ۔ ۔ ۔۔  خوہ وہ مشکلات کو حل کرنے۔۔۔یا  کروانےوالے ہوں ۔۔۔ بگڑیاں بنانے ۔۔کھوٹیاں کھری۔۔ڈوبتیاں تارنے والے۔۔۔ خزانوں کی عطا کے" مالک" ہوں۔۔۔ یا اولاد دینے والے ۔۔۔ سب کی نفی کلیتا نفی!!


"لا الٰہ" نفی ہے ۔ ۔۔نفی ہے ہندوؤں کے 33 کروڑ خداؤں کی۔۔۔لا الٰہ نفی ہے۔۔۔ عیسائی تثلیث کے گورکھ دھندے کی۔۔۔عیسیٰ یا عزیرعلیھما السلام کو اللہ کا بیٹا ماننے کی۔۔۔ لاالٰہ نفی ہے ہر شرک کرنے والے کے شرک کی!لا الٰہ نفی ہے نظاموں کی خدائی کی۔۔۔ اور خود ان نظاموں کی عبادت کرنے والوں کی!۔۔۔ جمہوریت، کمیونزم ۔۔۔ ہزاروں "ازم"۔۔۔لاالٰہ کی تلوار کی زد میں  ۔۔۔ ان کی نفی ان دولفظوں میں پنہاں!نفی ۔۔۔۔۔نفس کو الٰہ کا درجہ دینے کی۔۔۔ خواہش کا بت پوجنے کی۔۔۔ اسے شتر بے مہار خود پر لاگو کیے رکھنے۔۔۔اور۔۔۔ لذات و شہوات کا اسیر ہونے کی!


ہر فانی کی خدائی کی نفی لاالٰہ  ۔۔۔ شمس و قمر ۔۔۔شجر و حجر ۔۔۔ دیوتاا وتار۔۔۔ پیر پیغمبر ۔۔۔ اولیاء شہداء۔۔۔ نظام و خواہشات  ۔۔۔ کسی کو خدائی کا کوئی بھی درجہ۔۔۔کسی بھی طرح دینا ۔۔۔ اعلانیہ ۔۔۔یا پھر۔۔۔ حیلوں بہانوں سے۔۔۔تاویلات کے سہارے۔۔۔سب رد ہے ۔۔۔۔   مردود ہے۔۔۔خودی ہے تیغ فساں لا الٰہ الا اللہ!!!

الا اللہ

نفی کے بعداثبات!۔۔۔بس اب ایک کو مان لینا۔۔۔انما اللہ الٰہ واحد۔۔۔ معبودتو صرف ایک اللہ ہی ہے!۔۔۔لائق عبادت۔۔۔آنسوؤں بھری دعاؤں سے ۔۔۔جبین نیاز کے سجدوں تک کا سزاوار۔۔۔آہ سحرگاہی سے ۔۔۔ مناجات نیم شب تک۔۔۔عبودیت کی ہر ادا۔۔۔ ایک ہی کے لیے مخصوص۔۔۔یہ ہے مقصود "الا اللہ" !!


مخلوق اس کی تو۔۔۔حکم بھی صرف اسی کا۔۔۔الٰہ وہ اکیلا تو۔۔۔دین بھی فقط اس کا۔۔۔رب العالمین وہ تو۔۔۔سربلندی کا سزاواراسی کا  جھنڈا۔۔۔رزاق وہ ہے ۔۔۔نظام اس کا۔۔۔یہ تقاضائے لا الٰہ ہے!!
مردوںکو زندگی ۔۔۔بگڑی کو سنوارنا۔۔۔خزانے بخش دینا۔۔اولاد یں عطا کرنا۔۔۔اس ایک کا اختیار۔۔۔ناقابل "تقسیم"اختیار!۔۔دلوں کے حال سے آگاہ۔۔۔دل میں خیال ۔۔۔آنے سے بھی پہلے۔۔۔اسے جاننے والا!۔۔۔سب کی سب دعائیں ۔۔۔التجائیں مناجاتیں ۔۔۔ہر وقت۔۔۔ہر زبان ۔۔۔ہر جگہ سے سننے والا"سمیع"!۔۔۔ہر چیز۔۔۔ہر جگہ پر۔۔۔ہر وقت۔۔۔اس کے سامنے ۔۔۔ہر کھلا چھپا۔۔۔اندھیرا جالا۔۔۔ایک برابر دیکھنے والا"بصیر"!


محبت اور مودت کی انتہا۔۔۔صرف اس کے لیے۔۔۔عبادت و اطاعت بس اسی کے لیے۔۔۔کن فیکون کا حامل۔۔ صرف وہ! اعظم و اکبر۔۔۔وہاب و غفار۔۔۔قہار و جبار۔۔صرف وہی۔۔۔وحدہ لا شریک ہے۔۔۔ذو الجلال والاکرم ہے !!
قائم ہے قیوم ہے۔۔۔کائنات کو قیام۔۔۔اسی کی مشیت پر۔۔۔اسی کے ارادے پر۔۔۔جب تک وہ ہے! صرف مخلوق کا نہیں۔۔۔انہیں عطا ہونے والی زندگی اور۔۔۔ آلینے والی موت کا بھی ۔۔۔خالق ہے!! قادر مطلق۔۔۔اسباب سے ماوراء۔۔۔ مثالوں سے کہیں برتر!!


حتمی فیصلہ کرنے والا۔۔۔زندگی موت کا فیصلہ۔۔۔اچھے برے حالات کا فیصلہ۔۔۔اعمال کی قبولیت کا۔۔۔رد کا فیصلہ۔۔۔الیہ یرجع الامر کلہ۔۔۔سارے معاملات اسی کی طرف تو لوٹائے جاتے ہیں !۔۔۔اسی بارگاہ میں فیصلے ۔۔۔اور ان کا نفاذ ۔۔۔کوئی نہیں جو۔۔۔ان فیصلوں کو چیلنج کرسکے۔۔۔اس کا فیصلہ سوائے انصاف کے ۔۔۔اور ہوتا بھی کیا ہے! جیسا "منصف" وہ ہے ۔۔۔اور کوئی نہیں !! اسرع الحاسبین بھی ہے ۔۔۔احکم الحاکمین بھی!!تیز ترین محاسبہ ۔۔۔ درست ترین فیصلہ کرنے والا!!!


لاالٰہ الا اللہ۔۔۔ کلمہ نہیں۔۔۔الفاظ نہیں ۔۔۔عقیدہ و منہاج ہے۔۔۔سلوک ہے طریق ہے! ۔۔۔طریق نبوی ۔۔۔ایک سوچ ہے ۔۔۔فکر و دعوت ہے۔۔۔ سوچ و  فکرکی دنیاسے۔۔۔عالم رنگ و بوتک۔۔۔ایک تبدیلی۔۔۔دل و دماغ سے ۔۔۔قلب و نظر سے۔۔۔کار حکومت۔۔۔ایوان اقتدار تک۔۔۔ایک انقلابی دعوت!!لاالٰہ الا اللہ۔۔۔ ایک "قول ثابت"۔۔۔جو اس کو پا گیااس کو سمو گیا۔۔۔اس میں ڈھل گیا۔۔۔اس کے لیےصراط مستقیم سے ۔۔۔پل صراط تک۔۔۔خدا کا ساتھ ۔۔۔بشارتیں اور کامیابیاں۔۔۔تب "محمدرسول اللہ" کو سمجھنا بھی۔۔۔کوئی مشکل نہیں۔۔۔اور قدم قدم پر ۔۔۔راہ تکتی۔۔۔سلام کرتی  منزل بھی دور نہیں!!

07/06/2013


2 تبصرے:

  1. اللہ ہم سب کو موحد بنائے۔
    اور سچا پکا موحد

    جواب دیںحذف کریں
  2. سبحان اللہ۔۔۔ آپ نے "لا الہ الا اللہ" کے معنی کا حق ادا کر دیا۔۔۔ اللہ آپ کو جزائے خیر دے۔۔۔ یاد دہانی کا بہت بہت شکریہ۔۔۔

    جواب دیںحذف کریں